اسلام امن کا مذہب دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں

جیسے عیسائی ، یہودی اور بدھ دہشت گردی کی اصطلاحات غلط ہیں ویسے ہی اسلامی دہشت گردی کی اصطلاح بھی غلط ہے ،ترک صدررجب طیب اردوغان کے ہاتھوں جرمنی کی سب سے بڑی مسجد کا افتتاح

برلن،30ستمبر( ہ س)۔
ترکی کے صدر رجب طیب اردوغان نے جرمنی کے شہر کلون میں یورپ کی سب سے بڑی مسجدوں میں سے شمار ہونے والی مسجد کی رونمائی کر کے اپنے دورے کا اختتام کیا۔اس موقع پر ترکی کے صدر نے کہا کہ یہ مسجد امن کی نشانی ہے اور ساتھ ساتھ انھوں نے جرمن حکومت کا بھی شکریہ ادا کیا کہ انھوں نے مختلف حلقوں کی جانب سے دباو اور مظاہروں کے باوجود اس مسجد کی تعمیر جاری رکھی۔اردوغان کا تین روزہ دورہ جرمنی تنازعات سے خالی نہیں تھا اور اس دوران انھوں نے جرمن میزبانوں کی تنقید بھی کی۔واضح رہے کہ جرمنی میں 30 لاکھ ترک افراد رہائش پذیر ہیں۔
ترک صدر نے کہا کہ اسلام امن کا دین ہے اور اس میں دہشت گردی کی کوئی گنجائش نہیں ہے۔ترک صدر اردغان نے کہا کہ جیسے عیسائی دہشت گردی ، یہودی دہشت گردی اور بدھ دہشت گردی کی اصطلاحات غلط ہیں ویسے ہی اسلامی دہشت گردی کی اصطلاح بھی غلط ہے ، انہوں نے دہشت گرد تنظیموں کے درمیان امتیاز برتنے کے خلاف بھی ردعمل کا اظہار کیا۔انہوں نے کہا کہ ہم اپنے تمام مخاطبین سے دہشت گردی کے خلاف موزوں اور متوازن طرزعمل اختیار کرنے اور قاتلوں کے درمیان امتیازیت سے پرہیز کرنے کی اپیل کرتے ہیں۔
سنیچر کو کلون شہر میں اردوغان کے حامی اور مخالفین دونوں جمع تھے۔ لیکن سیکورٹی خدشات کی بنا پر انتظامیہ نے 25000 افراد کے مجمعے کو مسجد کے باہر جمع ہونے کی اجازت نہیں دی۔کلون شہر کی مرکزی مسجد کو ترکی سے تعلق رکھنے والے ایک مسلمان مذہبی گروپ نے تعمیر کیا ہے۔
اس سے قبل جمعے کو ہی اردوغان نے جرمنی کی چانسلر انگیلا میرکل سے ملاقات کی جہاں ان دونوں کو شام میں جاری جنگ کے بارے میں گفتگو کرنی تھی۔لیکن اس موقع پر اردوغان نے جرمنی کی رہنما پر زور دیا کہ وہ ان ترک افراد کو ملک بدر کر کے ترکی بھیجیں جو اردوغان کی حکومت کے مخالفین ہیں اور جنھیں وہ ‘دہشت گرد’ قرار دیتے ہیں۔

 

آپ ہمیں اپنی ہر طرح کی خبریں،مضامین،مراسلات اور ادبی تحریریں ارسال کریں۔۔۔ہم انھیں آپ کے نام کے ساتھ www.aakashtimes.com پرشائع کریں گے۔۔۔۔۔۔ادارہ

رابطہ:aakashtimes0@gmail.com