چمپارن کے تینوں بی جے پی ممبران پارلیمنٹ علاقہ تبدیل کر کے لڑ سکتے ہیں آنے والا الیکشن

بگہا،02۔مئی،ہ س:مہاتما گاندھی کی آزادی کی تحریک کا گواہ بنی سر زمین چمپارن سے بی جے پی نے گزشتہ لوک سبھا الیکشن میں یہاں کی تینوں سیٹیں جیت کر قبضہ تو کر لیا تھا لیکن آنے والے الیکشن کے لئے پارٹی اپنی جیت کے تئیں مطمئن نظر نہیں آ رہی ہے ۔سیاسی حلقے میں موضوع بحث ہے کہ تینوں اراکین پارلیمنٹ اپنا اپنا علاقہ بدل سکتے ہیں ۔ لوگوں کاکہنا ہے کہ موتیہاری کے رکن پارلیمنٹ اور مرکزی وزیر زراعت رادھا موہن سنگھ والمیکی لوک سبھا سیٹ سے لڑنا چاہتے ہیں ۔ بیتیا کے سنجے جائسوال کوٹکٹ نہیں دے کر بالمیکی نگر کے رکن پارلیمنٹ ستیش چندر دوبے کودئے جا سکتے ہیں ۔ موتیہاری سیٹ کو اتحادی پارٹی جے ڈی یو کو دیا جا سکتا ہے ۔ حالانکہ مغربی چمپارن کے بی جے پی ضلع صدر گنگا پرساد پانڈے کاکہنا ہے کہ پارٹی چمپارن کی تینوںسیٹ پر لڑے گی ۔ تینوں سیٹوں پر کون امیدوار ہوگا ، اس مسئلے پر ابھی کچھ کہنا جلد بازی ہوگی۔
دوسری طرف جیتے ہوئے امیدواروں کے سلسلے میں عام لوگوں میں یہ عام بحث ہے کہ بی جے پی کو تین تین رکن پارلیمنٹ رہتے ہوئے چمپارن کو مرکز سے اب تک کوئی خاص حصولیابی نہیں مل سکی۔ بیتیا کمار باغ کا اسٹیل پلانٹ چنپٹیا ۔موتیہاری کا چینی مل اب تک بند پڑا ہے ۔ بند رہنے سے ان جگہوں پر کسانوں کی خاص فصل گنا کی کھیتی 2014کی طرح ہی ہے ۔ بند فیکٹریوں کے مزدور بہا رے بارہ جا کرروزی روٹی کاجگاڑ کررہے ہیں جبکہ 2014کے لوک سبھا الیکشن میں وزیر اعظم عہدے کے دعویدار کے طور پر رہے نریندر مودی نے رام نگر اور موتیہاری کے عوامی جلسوں میں کہا تھا کہ ہماری سرکار اگرمکرز میں بنتیہے تو مزدور کسان اور بند پڑی فیکٹریوں کے لئے اچھے دن آئیں گے۔ رام نگر ،بگہا میں چل رہی چینی ملوں کاحال کسی سے پوشیدہ نہیں ہے ۔ دونوں چینی ملیں کسانوں کے گنے کے لئے مشہور ہیں۔ انتظامیہ نے ان دونوں چینی ملوں کو منتظمین پر ایف آئی آر درج کی ہے ۔ بگہا چینی مل پرکسانون کا اس سال فروری ،مارچ ،اپریل میں اربوں روپے سے زیادہ کا بقایہ ہے ،جبکہ گنا پیرائی کے معاملوں میں دونوں چینی مل ریکارڈ پیرائی کئے ہیں ۔ مزے کی بات یہ ہے کہ گاندھی جی کی تحریک آزادی کے ڈیڑھ سو برس ہونے کے پیش نظر بہار سرکار کے ذرہ ایک سال سے منائے جا رہے ستیہ گرہ کے ڈیڑھ سو سال کے اختتام پر وزیر اعظم چمپارن آئے۔ یہاں ملک بھر سے جمع ہوئے صفائی ستھرائی کرنے والے لوگوں کے درمیان صفائی مہم کی تحریک چھیڑ گئے لیکن کسان مزدوروں کے سلسلے میں کچھ بھی کہنا مناسب نہیں سمجھا۔ کسان و مزدورں کے مسائل پر وزیر اعظم کوکٹگھر میں کھڑاکرتے ہوئے آر جے ڈی کے اقلیتی سیل کے ریاستی سکریٹری عالم گیر ربانی کہتے ہیں کہ وزیر اعظم مودی کا کسانوں کے مسائل سے کوئی لینا دینا نہیں ہے ۔

 

آپ ہمیں اپنی ہر طرح کی خبریں،مضامین،مراسلات اور ادبی تحریریں ارسال کریں۔۔۔ہم انھیں آپ کے نام اور فوٹو کے ساتھ www.aakashtimes.com پرشائع کریں گے۔۔۔۔۔۔ادارہ

رابطہ:aakashtimes0@gmail.com