زہریلی شراب پینے سے 4 کی موت،6اسپتال میں داخل،زہریلی شراب ایس پی- بی ایس پی کی دین :ریتا بہوگنا جوشی

کانپور دیہات،20۔مئی،ہ س: اتر پردیش کے کانپور شہر ضلع کے بعد کانپور دیہات کے رورا تھانہ علاقے میں زہریلی شراب پینے سے چار لوگوں کی موت ہو گئی ہے ۔ موت کی اطلاع پر ضلع انتظامیہ میں ہنگامہ برپاہو گیا ہے اور ضلع افسر اور کپتان سمیت اعلیٰ افسران موقع پرپہنچ کر جانچ میںمصروف ہوگئے ہیں۔ خبرلکھے جانے تک ابھی بھی نصف درجن لوگ اسپتال میں زندگی اور موت سے جدوجہد کر ہرے ہیں۔ کانپور شہر میں ہفتہ کو زہریلی شراب پینے سے چھ لوگوں کی موت کا سلسلہ ابھی رکا نہیں تھا کہ کانپور دیہات ضلع میں اتوار کو زہریلی شراب پینے سے رورہ علاقے کے مڈولی گاو¿ں میں ماتم چھا گیا۔وزیر اعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ نے مذکورہ تھانہعلاقے میں زہریلی شراب پینے سے مرنے والوں کے رشتہ داروںکو دو دو لاکھ کی مدد دیئے جانے کا اعلان کی اہے ۔ انہوں نے اظہار افسوس بھی کیا تھا۔ اطلاع کے مطابق گاو¿ں کے لوگوں نے دیر رات رورا کے ایک سرکاری دیشی شراب کے ٹھیکے سے شراب لا کر پی اس کے بعد صبح ہوتے ہوتے تقریباً ایک درجن لوگوں کی طبیعت خراب ہو نے لگی اور کچھ تو خون کی الٹیاں کرنے لگے ۔ رشتہ داروں نے نزدیک کے اسپتال میں انہیں داخل کرایا جہاں چار لوگوں کی حالت نازک دیکھ کرڈاکٹروں نے ضلع اسپتال ریفر کر دیا ۔ جن کی علاج کے دوران موت ہوگئی اور نصف درجن لوگ ابھی بھی اسپتال میں زندگی اور موت سے جدو جہد کررہے ہیں۔ زہریلی شراب پینے سے ہوئی اموات کی خبر پر ضلع انتظامیہ میں ہنگامہ برپا ہو گیا ور ضلع افسروں نے رشتہ داروں کو تسلی دی اور قصور واروںکے خلاف سخت کارروائی کی بات کہی۔ کپتان نے بتایا کہ زہریلی شراب پینے سے مڑولی گاو¿ں ساکن ہری مشر( (35چھنا کشواہا(34) شیامو سنگھ(30) و نریندر سنگھ(40) کی موت ہو گئی اور راکیش دوبے سمیت چھلوگوں کی حالت ابھی بی نازک بنی ہوئی ہے ۔ انہوںنے بتایا کہ پولس شراب کے ٹھیکے کے ایک سیلس مین سرون کو حراست میں لے لیا گیا ہے پوچھ گچھ کی جارہی ہے ۔جلد ہی معاملے کا انکشاف کرقصور واروں کو سلاخوں کے اندر بھیجا جائے گا۔ضلع افسر نے بتایا کہ پورے معاملے کو لے کر انتظامیہ کو خط لکھ دیا گیا ہے اور وزیر اعلیٰ راحت خزانہ سے مرنے والوں کے اہل خانہ اور متاثرین کو اقتصادی مدد دلائی جائے گی۔ وہیں گاو¿ں والوں میں اس بات کا غصہ ہے کہ زہریلی شراب کے کھیل میں ایک سفید پوش لیڈر کا کردار مشتبہ ہے ۔ جس کے سبب پولس معاملے کو رفع دفع کرنے میں لگی ہے ۔
کانپورشہر اور کانپور دیہات میں دو دنوں کے اندر دس لوگوں کیموت زہریلی شراب پینے سے ہو گئی ۔ جس پر کانپور آئیں ریاستی سرکار کی کابینہ وزیر ریتا بہوگنا جوشی نے ایس پی اور بی ایس کو کٹگھرے میں کھڑا کر دیا ۔ کہا کہ انہیں سرکاروں کے سبب ریاست میں زہریلی شراب کا دھندہ عروج پر رہا ہے لیکن یوگی سرکار میں اب ایسے لوگ برابر جیل بھیجے جا رہے ہیں۔ کانپور کے قدوئی نگر واقع مکی ہاوس میں ایک پرائیویٹ پروگرام میں اتوار کو اتر پردیش سرکار کی کابینہ وزیر ڈاکٹرریتا بہوگنا جوشی نے شرکت کی۔ جہاں پر انہوں نے کھیل مقابلے میں حصہ لینے والے بچوں کو انعام سے نوازا۔ ا سکے بعد میڈیا سے مخاطب ہوئی اور کانپور شہر او رکانپور دیہات میں زہریلی شراب سے ہوئی اموات کے سوال پر انہوں نے کہا کہ یہ ایس پی اور بی ایس پی سرکار کی دین ہے ۔ ان سرکاروں میں بد عنوانی کو فروغ دیا گیا جس کے سبب زہریلی شراب کا کھیل ہوتا رہا۔ لیکن اب ایسے لوگوں پر ریاست کی یوگی سرکار سخت رویہ اپنائے ہوئے ہیں اور جیل بھی بھیجا جا رہا ہے ۔ڈاکٹر بہوگنا نے کہا کہ یوگی سرکار نے ان کی سرکار میں بنی آبکاری پالیسیوں اور نقلی زہریلی شراب کے دھندے پر پوری طرح سے روکلگا دی ہے ۔ کہا کہ کانپور شہر اور کانپور دیہات میں ہوئی اموات پر سرکار بے حد سنجیدہ ہے اور جلد ہیاس پورے کھیل میں شامل لوگوںکوبے نقاب کیا جائے گا۔اس کے ساتھ ہی کہا کہ کانپور شر میں ہوئے حادثے میں وزیراعلیٰ نے فوری اقتصادی مدد دی ہے اور آج ہی ممکن ہے کہ کانپور دیہات میں ہوئے واقعہ میں اقتصادی مدد پہنچ جائے گی۔وہیں کرناٹک میں بی جے پی کی سرکار گرنے کے سوال پر جواب دیتے ہﺅے کہا کہ یدی یورپا نے اکثریت پیش کرنے سے پہلےہی استعفیٰ دے دیا تھا ۔ کانگریس اور جے ڈی ایس نے کرناٹک کے عوام کے ساتھ نا انصافی کی ہے لیکن ان کا یہ ساتھ زیادہ دنوں تک نہیں چلنے والا ہے اور پھر الیکشن ہوں گے ۔ جس سے رہی سہی کسر آب کی بار بی جے پی کو مکمل اکثریت کی سرکار دے کر پوری کر دے گی ۔ وہیں کیرانہ اور نور پر میںہونے والے ضمنی الیکشن میں جیت کا دعویٰ بھی کیا۔

 

آپ ہمیں اپنی ہر طرح کی خبریں،مضامین،مراسلات اور ادبی تحریریں ارسال کریں۔۔۔ہم انھیں آپ کے نام اور فوٹو کے ساتھ www.aakashtimes.com پرشائع کریں گے۔۔۔۔۔۔ادارہ